Home | Pakistan News | Politics | Current Affairs | Religious Affairs | Human Rights | Terrorism News | Write to Us | Links Partners
Google
 

9th of November, public holiday in pakistan called Iqbal day,"Poet of the East", It was the 130th birth anniversary of the Poet Allama Iqbal.
Iqbal inspiring work refects in his poetry, social reformer, his poetry reflect the ideology of islam, he believes in the foundation of muslim state based on the principles of islam. He gave a new spirit and urged for unity of Muslims as one nation, his influential work will remain guidelines for upcoming period. Some of his poetic work which i like to share with you.




دريوزہ خلافت

اگر ملک ہاتھوں سے جاتا ہے، جائے
تو احکام حق سے نہ کر بے وفائي
نہيں تجھ کو تاريخ سے آگہي کيا
خلافت کي کرنے لگا تو گدائي
خريديں نہ جس کو ہم اپنے لہو سے
مسلماں کو ہے ننگ وہ پادشائي
مرا از شکستن چناں عار نايد ''
'' کہ از ديگراں خواستن موميائي

بلاد اسلاميہ

سرزميں دلي کي مسجود دل غم ديدہ ہے
ذرے ذرے ميں لہو اسلاف کا خوابيدہ ہے
پاک اس اجڑے گلستاں کي نہ ہو کيونکر زميں
خانقاہ عظمت اسلام ہے يہ سرزميں
سوتے ہيں اس خاک ميں خير الامم کے تاجدار
نظم عالم کا رہا جن کي حکومت پر مدار
دل کو تڑپاتي ہے اب تک گرمي محفل کي ياد
جل چکا حاصل مگر محفوظ ہے حاصل کي ياد
ہے زيارت گاہ مسلم گو جہان آباد بھي
اس کرامت کا مگر حق دار ہے بغداد بھي
يہ چمن وہ ہے کہ تھا جس کے ليے سامان ناز
لالہ صحرا جسے کہتے ہيں تہذيب حجاز
خاک اس بستي کي ہو کيونکر نہ ہمدوش ارم
جس نے ديکھے جانشينان پيمبر کے قدم
جس کے غنچے تھے چمن ساماں ، وہ گلشن ہے يہي
کاپنتا تھا جن سے روما ، ان کا مدفن ہے يہي
ہے زمين قرطبہ بھي ديدہء مسلم کا نور
ظلمت مغرب ميں جو روشن تھي مثل شمع طور
بجھ کے بزم ملت بيضا پريشاں کر گئي
اور ديا تہذيب حاضر کا فروزاں کر گئي
قبر اس تہذيب کي يہ سر زمين پاک ہے
جس سے تاک گلشن يورپ کي رگ نم ناک ہے
خطہ قسطنطنيہ يعني قيصر کا ديار
مہدي امت کي سطوت کا نشان پائدار
صورت خاک حرم يہ سر زميں بھي پاک ہے
آستان مسند آرائے شہ لولاک ہے
نکہت گل کي طرح پاکيزہ ہے اس کي ہوا
تربت ايوب انصاري سے آتي ہے صدا
اے مسلماں! ملت اسلام کا دل ہے يہ شہر
سينکڑوں صديوں کي کشت و خوں کا حاصل ہے يہ شہر
وہ زميں ہے تو مگر اے خواب گاہ مصطفي
ديد ہے کعبے کو تيري حج اکبر سے سوا
خاتم ہستي ميں تو تاباں ہے مانند نگيں
اپني عظمت کي ولادت گاہ تھي تيري زميں
تجھ ميں راحت اس شہنشاہ معظم کو ملي
جس کے دامن ميں اماں اقوام عالم کو ملي
نام ليوا جس کے شاہنشاہ عالم کے ہوئے
جانشيں قيصر کے ، وارث مسند جم کے ہوئے
ہے اگر قوميت اسلام پابند مقام
ہند ہي بنياد ہے اس کي ، نہ فارس ہے ، نہ شام
آہ يثرب! ديس ہے مسلم کا تو ، ماوا ہے تو
نقطہ جاذب تاثر کي شعاعوں کا ہے تو
جب تلک باقي ہے تو دنيا ميں ، باقي ہم بھي ہيں
صبح ہے تو اس چمن ميں گوہر شبنم بھي ہيں

جمہوريت

اس راز کو اک مرد فرنگي نے کيا فاش
ہر چند کہ دانا اسے کھولا نہيں کرتے
جمہوريت اک طرز حکومت ہے کہ جس ميں
بندوں کو گنا کرتے ہيں ، تولا نہيں کرتے


Now i like to share some of Allama Iqbal famous quotes:

"Since love first made the breast an instrument
Of fierce lamenting, by its flame my heart
Was molten to a mirror, like a rose
I pluck my breast apart, that I may hang
This mirror in your sight
Gaze you therein."
"IQBAL"

"I am but as the spark that gleams for a moment,
His burning candle consumed me - the moth;
His wine overwhelmed my goblet,
The master of Rum transmuted my earth to gold
And set my ashes aflame."
"IQBAL"

"But only a brief moment
is granted to the brave
one breath or two, whose wage is
The long nights of the grave."
"IQBAL"

"I have seen the movement of the sinews of the sky,
And the blood coursing in the veins of the moon."
"IQBAL"

0 comments

Post a Comment